وحدت نیوز(گلگت) مجلس وحدت مسلمین کے رکن گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی ڈاکٹر حاجی رضوان علی ، ڈاکٹر علی گوہر، الیاس صدیقی، عارف قمبری ودیگر رہنماوں نے گلگت پریس کلب میں میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ  مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے رہنما شیخ نیئر عباس مصطفوی نے رضاکارانہ طور پر مقامی پولیس کو گرفتاری دی ۔شیخ نیئر عباس مصطفوی کی گرفتاری اور ان کے موقف کو سیاق وسباق سے ہٹ کر مختلف انداز میں پیش کیا گیا جس پر مجلس وحدت کی قیادت نے مناسب سمجھا کہ اس پریس کانفرنس کے ذریعے اپنی اس رضاکارانہ گرفتاری اور شیخ نیئر عباس کے موقف کا اظہار کیا جائے۔

شیخ نیئر عباس کی رضاکارانہ گرفتاری کو بعض حلقوں کی جانب سے ملکی قوانین کے انکار سے تعبیر کرنے کی کوشش کی ہے جو کہ صریحاً غلط اور بلاجواز ہے۔

٭    شیخ صاحب کی احتجاجی گرفتاری ملکی سلامتی کیلئے بنائے جانیوالے کسی قانون کے خلاف نہیں بلکہ ان قوانین کے بیجا استعمال پر احتجاج ہے۔
٭    رہنما مجلس وحدت مسلمین کی احتجاجی گرفتاری ملکی سلامتی کے ضامن قوانین کے سیاسی استعمال کی بنا پر ہے۔
٭    شیخ نیئر عباس کی احتجاجی گرفتاری نیشنل ایکشن پلان کو سبوتاژ کرنے کی سازشوں کے خلاف ہے۔
٭    ان کی احتجاجی گرفتاری محب وطن اور غدار کو ایک صف میں کھڑا کرکے آپریشن ضرب عضب اور ردالفساد کو عوام میں غیرمقبول کرنے کی سازش کے خلاف ہے۔
٭    شیخ نیئر عباس کی رضاکارانہ احتجاجی گرفتاری ہر اس مکروہ فکر اور ذہنیت کے خلاف ہے جو ملکی سلامتی کے ضامن قوانین اور اداروں کے خلاف عوام کے دلوں میں نفرت پیدا کرنا چاہتے ہیں۔

رہنماوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین اتحاد بین المسلمین کی داعی وہ واحد سیاسی جماعت ہے جس کا موقف ملکی سلامتی کے حوالے سے نہایت دوٹوک اور واضح رہا ہے۔جب ملکی سلامتی کو طالبانائزیشن اور انتہا پسندی سے حقیقی خطرہ لاحق تھا  اس وقت مجلس وحدت مسلمین ہی وہ واحد جماعت تھی جو ان دہشت گردوں کے ساتھ کسی قسم کی رعایت اور ہمدردی کے حق میں نہیں تھی اور ریاستی اداروں کے شانہ بشانہ ہر قسم کی قربانی کیلئے آمادہ تھی۔مجلس وحدت مسلمین نے ہر اس اقدام، قانون کی صف اول میں کھڑے ہوکر حمایت کی جو ملکی سلامتی کیلئے ضروری ہو۔پاکستان کے محب وطن عوا م کی دعائوں اور مسلح افواج کی لازوال قربانیوں کی بدولت آج دہشت گردی وانتہا پسندی کی جڑوں کو کمزور کیا جاچکا ہے اور انشاء اللہ بہت جلد دہشت گردی کے اس ناسور کا خاتمہ کیا جائیگا۔یہ بات بھی روز روشن کی طرح واضح ہے کہ حکمران جماعت کی صفوں میں موجود دہشت گردوں کے سہولت کار ملک دشمن دہشت گردوں کو بچانے کی آخری کوششیں کررہے ہیں تاکہ مسلح افواج کی ان لازوال قربانیوں کو متنازعہ بنایا جائے۔گلگت بلتستان جو کہ پاکستان کی جان اورخوشحالی کی ضامن سی پیک کی شہ رگ ہے کے عوام کو مایوس و متنفر کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔

رہنماوں نے مزید کہا کہ ملت کے بزرگ علمائے کرام کو دہشت گردوں کی صف میں کھڑا کرکے پوری ملت کی تضحیک کی جارہی ہے۔شیخ نیئر عباس مصطفوی، شیخ مرزا علی، شیخ شبیر حکیمی، شیخ اقبال توسلی،شیخ محمد علی حیدری اور شریف النفس سیاستدان دیدار علی ودیگر اکابرین کو دہشت گردوں کے ساتھ شیڈول فور میں شامل کرکے پوری ملت کی توہین اور عوام کو اشتعال دلانے کی کوشش کی جارہی ہے۔حسینیت زندہ باد اور یزیدیت مردہ باد کہنے پر سینکڑوں طلباء پر انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت مقد مات قائم کئے گئے،ہماری زمینوں سے ہمیں بیدخل کیا جارہا ہے،میرٹ کو پامال کرکے بیلنس پالیسی کو فروغ دیا جارہا ہے اس کے علاوہ ملت کے ساتھ سنگین زیادتیوں کے باوجود ہم نے صبر کا دامن تھامے رکھا ہے اور ہم سمجھتے ہیں کہ ہمارا صبر ریاست کی بقا اور شہداء کے پاک لہو کی حرمت  کی خاطرہے جنہوں نے ارض پاک سے فتنے کے خاتمے کیلئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا ہے۔

حاجی رضوان علی نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین آپ صحافی دوستوں کے توسط سے ارباب اختیار خاص طور پر آپریشن ردالفساد کے سپہ سالار جنرل قمر جاوید باجوہ ، فورس کمانڈرایف سی این اے اور چیف جسٹس سپریم اپیلٹ کورٹ کی توجہ اس انتہائی حساس صورت حال کی جانب مبذول کروانا چاہتی ہیں تاکہ شہداء کی قربانیوں کے ثمرات کو ضائع ہونے سے بچایاجاسکے۔

وحدت نیوز(مظفر گڑھ) مجلس وحدت مسلمین ضلع مظفرگڑھ کے زیراہتمام ''استحکام پاکستان و امام مہدی کانفرنس ''مظفرگڑھ کے ضلع کونسل ہال میں منعقد ہوئی، کانفرنس کی صدارت مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی رہنما علامہ محمد اصغر عسکری نے کی، جبکہ مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل محمد عباس صدیقی اور رانا مشتاق مہمان خصوصی تھے۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایم ڈبلیو ایم کے مرکزی رہنما علامہ اصغر عسکری نے کہا کہ ملک بھر میں دہشتگردی کے خلاف ہونے والے آپریشنز کی مجلس وحدت مسلمین مکمل حمایت کرتی ہے، علامہ اصغر عسکری نے نیشنل ایکشن پلان، آپریشن ضرب عضب اور آپریشن ردالفساد کی مکمل حمایت کا علان کرتے ہوئے کہا کہ پوری قوم پاک کے شانہ بشانہ کھڑے ہوکر ملکی سلامتی کے لیے ہر قربانی دینے کے لیے تیار ہے، اُنہوں نے کہا کہ ملک میں بلاتفریق دہشتگردی کے خلاف آپریشن سے دہشتگردی جیسی لعنت سے چھٹکارا حاصل کیا جا سکتا ہے۔ ایم ڈبلیو ایم ایم جنوبی پنجاب کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل محمد عباس صدیقی نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملکی سلامتی اور استحکام کے لیے دہشتگردوں کا قلع قمع کرنا ضروری ہے، حکومتی صفوں میں چھپے دہشتگردوں کے سہولت کاروں کے خلاف بھی کاروائی کی جائے۔ اُنہوں نے کہا کہ عالم اسلام کو متحد کرنے کی بجائے امریکہ کی گود میں بٹھایا جا رہا ہے، اس موقع پر ضلعی سیکرٹری جنرل علی رضا طوری، صوبائی سیکرٹری تنظیم سازی سید عدیل عباس زیدی، سیکرٹری تربیت سید وسیم عباس زیدی، ضلعی سیکرٹری سیاسیات مظفرگڑھ نعیم کاظمی اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

وحدت نیوز(سکھر) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کندھرا ضلع سکھرکے زیر اہتمام جشن امام زمانہ عج کی پر وقار تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ایم ڈبلیو ایم سندہ کے صوبائی سیکریٹری جنرل علامہ مقصودعلی ڈومکی نے کہاہے کہ کبھی ضعیف اور کمزور لوگوں سے مقابلے کے لئے چالیس ممالک کو اکھٹا نہیں کیا جاتا، نظام ولایت کی ہیبت و عظمت نے انسان دشمن سامراجی قوتوں کو خوفزدہ کردیا ہے،آل سعود کا مکروہ چہرہ بے نقاب ہونے پر خدا کا شکر ادا کرتے ہیں۔ شیطان بزرگ امریکہ اور ان کے غلام اسلام ناب سے جنگ کے لئے جمع ہوئے، کاش اسلامی ممالک کے اس سربراہی اجلاس میں کوئی ایک باغیرت انسان موجود ہوتا جو کشمیر و فلسطین کے مظلوم مسلمانوں کے حق میں آواز اٹھاتا۔ انہوں نے کہا کہ مستقبل قریب میں اقوام عالم کی بیداری اور اولیائے خدا کی جدوجہد کے نتیجہ میں وہ منظر دیکھنے کو ملے گا جسے سوچ کر امریکہ ، اسرائیل اور آل سعود پر لرزہ طاری ہے۔

انہوں نے کہا کہ بحرین کے انقلابی عوام پر آل خلیفہ اور آل سعود کے مظالم ، انقلابی تحریک کو ختم کرنے میں ناکام ہونگے۔ ہم بحرین کے مجاہد و مبارز عالم دین آیۃ اللہ شیخ عیسیٰ قاسم کے گھر پر حملے اور انقلابی جوانوں پر مظالم کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم بحرینی عوام کی پر امن، جمہوری اور انقلابی جدوجہد کی مکمل حمایت کرتے ہوئے آل خلیفہ سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ فی الفور مستعفی ہو کر اقتدار عوام کے حوالے کردیں۔

وحدت نیوز(سکردو) مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے صوبائی سیکریٹری جنرل ور معروف عالم دین سید علی رضوی اور ضلع سکردو کے سیکریٹری جنرل شیخ فدا علی ذیشان نے حالیہ دنوں حکومتی نا اہلیوں کے خلاف احتجاج کرنیوالے علمائے دین و عوام خصوصا معروف عالم دین علامہ حافظ زبیری اور شیخ حسن جوہری کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کو علاقے کے امن و امان کو سبوتاژ کرنے کی سازش اور بنیادی شہری حقوق کو سلب کرنے کی کوشش قراردیتے ہوئے کہا ان علماء کو گرفتارکرنے کی کوشش ناقابل قبول ہے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ حکومت اور مقامی انتظامیہ ہوش کے نا خن لیں اور اپنی حدود میں رہیں، ایسا نہ ہو کہ انکی عوام و علاقہ دشمن اقدامات سے علاقہ بد امنی کی طرف جائے اور حالات خراب ہوں، ھم نہیں چاہتے کہ علاقے کا امن و امان مخدوش ہو، لیکن جرائم پیشہ افراد، دہشت گردوں، کرپٹ عناصر، منشیات فروشوں اور عزتوں کو نیلام کرنیوالوں کو چھوٹ دیتے ہوئے پر امن اور عوام کی حقوق کیلئے آواز اٹھانے والوں کے گرد گھیرا تنگ کرکے عوام کا استحصال کرنا شروع کریں توحکومت اور انتظامیہ کا اصل چہرہ عوام میں پیش کرنے پر مجبور ہونگے۔ ایسا نہ ہو کہ حالات خراب ہوں اور انتظامی افسران کی کوتاہیاں اور نا اہلیاں ان کا ذمہ دار قرار پائے۔ شیخ فدا علی ذیشان نے اپنے بیان میں کہا کہ جرائم پیشہ افراد کو کھلی چھوٹ دیکر حق گو اورحق پرست افراد کے خلاف قانونی چارہ جوئی اور ایف آئی آر درج کرنا مقامی انتظامیہ اور قانون کی بالادستی کے کھوکھلے نعرے لگانے والی انتظامیہ کے منہ پر طمانچہ ہے۔ مقامی انتظامیہ جان بوجھ کر حالات خراب کرنے کی کوشش کر رہی ہے لہٰذا ہم متنبہ کرتے ہیں کہ کسی بھی عالم کو گرفتار کرنے کی کوشش کی گئی تو حالات خراب ہونگے جس کی تمام تر ذمہ داری مقامی انتظامیہ پر عائد ہوگی۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصرعباس جعفری نے کہا ہے کہ امریکی صدر ٹرمپ کے سعودی عرب دورے کے دوران کسی بھی حکمران کو یہ اخلاقی جرات نہیں ہوئی کہ وہ امت مسلمہ کے حقوق کا دفاع کرتا۔سعودی عرب سمیت دیگر ممالک کے سربراہان کی طرف سے ٹرمپ کے متعصبانہ طرز عمل کا جواب نہ دیا جانا اخلاقی تنزلی کی بدترین مثال ہے۔انہوں نے کہا کہ امریکہ اس وقت امت مسلمہ کے خلاف ایک ایسا نام نہاد اسلامی بلاک تشکیل دینے جا رہا ہے جسے مسلم ممالک کی تباہی کے لیے استعمال کیا جائے گا۔ایسی صورتحال میں پاکستان کو فریق بننے کی بجائے ثالثی کا کردار ادا کرنا چاہیے۔ ایران سے امریکی و سعودی مخاصمت کسی اصولی موقف کی بنیاد پر نہیں بلکہ ایران کے خالص اسلامی نظریات کی بنیاد پر ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سترہزار سے زائد افراد دہشت گردی کا شکار ہوئے۔امریکہ کے ڈومور کے مطالبے نے ہماری معاشی بنیادوں کو کھوکھلا کر کے رکھ دیا ۔اس کے باوجود ٹرمپ نے عالمی دہشت گردی کا ذکر کرتے وقت پاکستان کا نام تک نہ لیا۔وزیر اعظم نوازشریف کو احتجاجََ تقریب کا بائیکاٹ کر کے واپس پلٹ جانا چاہیے تھا۔لیکن اس طرح کا جرات مندانہ فیصلہ صرف وہ حکمران کر سکتے ہیں جنہوں نے غلامی کا طوق اتار پھینکا ہو۔انہوں نے کہا امریکہ عرب اتحاد کا اصل ہدف مسلمانوں کا وہ مزاحمتی بلاک ہے جو امریکی احکام کو کسی خاطر میں نہیں لاتا۔اس بلاک کو نقصان پہچانے کے لیے مسلمانوں کو ہی استعمال کیا جا رہا ہے۔ کسی بھی ایسے اقدام کی حمایت قطعاََ ہمارے حق میں نہیں۔ہمیں کشمیر،فلسطین اور دنیا بھر کے مظلوم مسلمانوں کے لیے آواز بلند کرنے والی قوتوں کا ساتھ دینا ہو گا۔

وحدت نیوز (رپورٹ/ ایم آر عابدی) مجلس وحدت مسلمین پاکستان صوبہ سندھ کی جانب سے منجی بشریت امام مہدی (عج) سے ایفائے عہد کیلئے، وطن عزیز میں عزاداری سید الشہداء کو محدود کرنے کی سازشوں کیخلاف، پاکستان میں عادلانہ نظام کے قیام کیلئے، شیعہ نسل کشی کیخلاف، نیشنل ایکشن پلان پر درست عملدرآمد کیلئے، پاکستانی ایجنسیوں کی جانب سے لاپتہ کئے گئے علماء و جوانوں کی رہائی کیلئے اور وطن عزیز میں بڑھتی ہوئی سعودی و امریکی مداخلت کیخلاف عظیم الشان استحکام پاکستان و امام مہدی (عج) کانفرنس کراچی کے نشتر پارک میں منعقد کی گئی۔ استحکام پاکستان کی تیاریوں کے سلسلے میں ایم ڈبلیو ایم کراچی کی جانب سے 22 روزہ عوامی رابطہ مہم چلائی گئی، جس میں علامہ راجہ ناصر عباس جعفری، علامہ امین شہیدی، علامہ حسن ظفر نقوی، علامہ احمد اقبال رضوی، علامہ مختار امامی، علامہ مرزایوسف حسین، علامہ علی رضوی، علامہ اعجاز بہشتی، علامہ اقتدار نقوی، علامہ مبشر حسن، علامہ علی انور جعفری، علامہ صادق جعفری، علامہ باقر زیدی، علامہ حیدر عباس عابدی، علامہ احسان دانش، علامہ مقصود ڈومکی، علی حسین نقوی سمیت دیگر رہنماؤں نے مختلف آبادیوں میں قائم مساجد میں جاکر عوام کو کانفرنس کے اغراض و مقاصد سے آگاہ کیا۔ جوں جوں کانفرنس کا وقت قریب آتا گیا عوامی رابطہ مہم بھی زور پکڑتی گئی۔ شہر بھر میں مجلس وحدت کے کارکنان نے 20 ہزار سے زائد پوسٹرز جبکہ 2 ہزار سے زائد بینرز آویزاں کئے جبکہ وال چاکنگ بھی کی گئی۔

کانفرنس کی عوامی رابطہ مہم میں اپنے خطابات میں مقررین نے سعودی شہزادہ محمد بن سلمان کی جانب سے منجی بشریت امام مہدی (عج) کے ظہور کی راہیں ہموار کرنے والوں سے جنگ کے اعلان کے بعد کے حالات پر مکمل بریفنگ دی اور شام، یمن، عراق، بحرین، لبنان، فلسطین کی صورتحال کے تناطر میں پاکستانیوں کی ذمہ داریوں پر عوام میں آگاہی فراہم کی۔ مقررین نے کہا کہ پاکستان اس وقت شدید بیرونی مداخلت کا شکار ہے، کرپٹ حکمرانوں نے ذاتی مفادات کی خاطر قومی سلامتی کو داﺅ پر لگا دیا ہے، ویسٹرن ایشیاء میں شکست کھانے کے بعد دہشت گرد گروہوں کو عالمی استعماری قوتیں پاکستان میں آباد کرنا چاہتی ہیں جس کا آغاز ہوچکا ہے، پاراچنار میں حالیہ تینوں دہشت گرد حملوں کی ذمہ داری داعش اور اس کے حامی گروہوں نے قبول کی ہے، جو پاکستان میں عالمی دہشت گردوں کی موجودگی کا ثبوت ہے۔ مقررین کا مزید کہنا تھا کہ عالمی صیہونی طاقتیں اور امریکہ اپنی حواری عرب ریاستوں کے ساتھ مل کر امام زمانہ (عج) کے ظہور کے راستے میں رکاوٹیں کھڑی کرنا چاہتے ہیں، عالمی شیطانی قوتوں اور مقاومتی بلاک کے درمیان شدید ٹکراؤ جاری ہے، ایشیائی ممالک میں دراڑ ڈالنے، سرحدیں توڑنے اور من پسند جغرافیائی تبدیلوں کے لئے سازشوں کے جال بنے جا رہے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان میں اہلسنت اور تشیع امام مہدی علیہ السلام پر ایمان رکھتے ہیں، پاکستان میں جعلی امام کعبہ کو لاکر مکہ مدینہ کے نام پر آل سعود کے ناجائز اقتدار کی بقاء و سلامتی کیلئے راہ ہموار کرنے کی کوشش کی جا رہی ہیں، انشاء اللہ 21 مئی کو نشتر پارک میں حقیقی وارث کعبہ امام مہدی (عج) کے عاشقان کا عظیم اجتماع منعقد ہوگا جو کہ ظہور امام عصرؑ کی مخالف قوتوں کو واضح پیغام دے گا۔

کانفرنس کے آغاز سے دو روز قبل نشتر پارک میں جلسہ گاہ کی تیاریوں کا آغاز کیا گیا، دو روز کی کڑی محنت کے بعد استحکام پاکستان و امام مہدی (عج) کانفرنس کا جلسہ گاہ پایہ تکمیل کو پہنچا۔ جس میں 16 ہزار سے زائد کرسیاں لگائی گئی تھیں جبکہ تقریباً 60 فٹ کا اسٹیج تیار کیا گیا۔ جلسہ گاہ میں خواتین کی جانب 6 ہزار جبکہ مردوں کی جانب 10 ہزار کرسیاں بچھائی گئی تھیں۔ جلسہ گاہ میں پیام ولایت فاؤنڈیشن، خیرالعمل فاؤنڈیشن سمیت دیگر فلاحی اداروں نے اپنے کیمپ بھی لگائے تھے۔ جلسے میں نماز مغربین کے انتظامات کے فرائض آئی ایس او کراچی ڈویژن نے انجام دیئے، جس کیلئے باقاعدہ وضو آپریٹس بھی لگایا تھا۔ کانفرنس کی تیاریوں کے سلسلے میں ایم ڈبلیو ایم کے مرکزی رہنما مہدی عابدی، صوبائی رہنما حیدر زیدی، کراچی ڈویژن کے رہنما میثم عابدی، علامہ مبشر حسن، علامہ علی انور جعفری، کاظم عباس مستقل دو روز تک پنڈال کی تیاریوں کے سلسلے میں نشتر پارک میں موجود رہے۔ جلسہ گاہ میں سوشل میڈیا ٹیم، اخباری رپورٹرز اور نجی ٹی وی چینلز کے نمائندگان کیلئے الگ الگ کیمپ بھی لگائے گئے تھے۔ کانفرنس میں شریک ہونے والے شرکاء کیلئے 30 ہزار سے زائد کھانے کے پیکٹ بنوائے گئے تھے۔ کانفرنس کی سیکورٹی کے تمام فرائض وحدت یوتھ کے 300 سے زائد ضاکاروں نے انجام دیئے جبکہ اس موقع پر ناصران اسکاؤٹس، امامیہ اسکاؤٹس سمیت دیگر اسکاؤٹس کے رضاکاروں کی بھی بڑی تعداد عوام کی سیکورٹی اور جلسہ کے انتظامات کیلئے موجود تھی۔

استحکام پاکستان و امام مہدی (عج) کانفرنس کے پنڈال میں لبیک یا مہدی (عج) العجل یا امام زمانہ (عج) اور مجلس وحدت کے پرچم بھی بڑی تعداد میں لگائے گئے تھے۔ کانفرنس والے روز شدید گرمی کے باوجود تین بجے سے ہی پندال میں عوام کی آمد کا سلسلہ شروع ہوا۔ کراچی ڈویژن اور حیدرآباد ڈویژن سے آنے والے عوام کی سہولت کیلئے پارکنگ کا انتظام باغ جناح میں کیا گیا۔ شدید گرمی میں آنے والی عوام کے حوصلے دیدنی تھے۔ شدید گرمی کی وجہ سے عوام کی سہولت کیلئے چار مقامات پر سبیلوں کا انتظام کیا گیا تھا۔ ساڑھے تین بجے کانفرنس کا آغاز علامہ احسان دانش نے تلاوت کلام پاک سے کیا جس کے بعد کراچی ڈویژن کی جانب سے علامہ علی انور جعفری نے خطبہ استقبالیہ پیش کیا۔ بعد ازاں علامہ صادق جعفری نے نعت رسول مقبول (ص) سے عوام کے قلوب کو منور کیا۔ نعت کے بعد خطابات کا سلسلہ شروع ہوا۔ شام ساڑھے 5 بجے تک پنڈال میں کرسیاں ختم ہوچکی تھیں، بعدازاں مردوں والے حصے میں مزید کرسیاں بچھائی گئیں۔ کانفرنس میں علامہ اقبال بہشتی، علامہ مقصود ڈومکی، علامہ امین شہیدی، علامہ مرزا یوسف حسین، علامہ برکت مطہری، علامہ اظہر نقوی، علامہ علی رضوی، علی حسین نقوی، علامہ ظہیر الحسن نقوی آف امریکہ، علامہ اقتدار نقوی سمیت دیگر مقررین نے خطاب کیا۔

شام ساڑھے پانچ بجے علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کی جلسہ گاہ میں آمد ہوئی جن کا عوام اور علماء نے کھڑے ہوکر استقبال کیا۔ 6:30 بجے شام کانفرنس کا مرکزی خطاب علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کیا۔ اس موقع پر پنڈال کے باہر گلیوں میں بھی عوام علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کا خطاب سننے کیلئے موجود تھی۔ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے اپنے خطاب میں کہا کہ ظہور امام مہدیؑ کے دشمن امریکہ، اسرائیل اور آل سعود ہیں، یہ پاکستان کو یمن، بحرین اور شام کی طرح کمزور کرنا چاہتے ہیں، آل سعود اور امریکہ یمن کے اندر گھٹنے ٹیکنے پر مجبور ہوچکی ہیں، کیونکہ یمن کی عوام نے حق کا ساتھ اور استقامت نہیں چھوڑی، ہمارے دشمن پاکستان کو ایک نئی دلدل میں لے جانا چاہتے ہیں، آمر جنرل ضیاء جنگ کو ملک کے اندر لے کر آیا، ملک کو تباہ و برباد کیا اور تکفیریت کو پروان چڑھایا، اب پاکستان کو آل سعود کے الائنس میں لے جا یا جارہا ہے، ہماری خارجہ پالیسی امریکہ، اسرائیل اور آل سعود چلا رہے ہیں، ہم کسی ہمسایہ ممالک کے ساتھ تعلقات خراب نہیں ہونے دیں گے، ملک کو آل سعود کے ہاتھوں نہیں بیچنے دیں، پاکستان میں ظالم حکمرانوں کا راستہ روکنا ہے۔

اذان مغرب کے ساتھ ہی علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کےخطاب کا اختتام ہوا، جس کے بعد شرکاء نے نماز مغربین ادا کی۔ نماز کی امامت بزرگ عالم دین علامہ مرزا یوسف حسین نے کی۔ نماز مغربین کے بعد جشن ولادت امام مہدی (عج) کا آغاز ہوا۔ جشن میں دستہ امامیہ کے صاحب بیاض عاطر حیدر، علی دیپ رضوی، شاہ رخ حسین، راجہ یاسر عباس نے امام مہدی (عج) کی شان میں کلام پیش کئے۔ جشن سے خطاب معروف ذاکر اہل بیت (ع) علامہ ڈاکٹر ماجد رضا عابدی، علامہ احمد اقبال رضوی اور علامہ حسن ظفر نقوی نے کیا۔ کانفرنس کی نظامت کے فرائض علامہ مختار امامی اور علامہ مبشر حسن نے انجام دیئے۔ جشن کے اختتام پر امام مہدی (عج) کی ولادت کی خوشی میں شاندار آتشبازی کا بھی اہتمام کیا گیا۔ کانفرنس کی سیکورٹی کیلئے رضاکاروں کے ساتھ ساتھ سندھ پولیس اور رینجرز کے جوانوں کی بھی بڑی تعداد جلسہ گاہ کی حفاظت پر مامور تھی۔ کانفرنس کے آخر میں علی حسین نقوی نے ایم ڈبلیو ایم کراچی ڈویژن کی جانب سے پولیس، رینجرز اور سول انتظامیہ کے افراد کا شکریہ ادا کیا کہ جنہوں نے اس کانفرنس کے انعقاد میں بھرپور تعاون کیا۔

Page 1 of 490

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree