وحدت نیوز(آرٹیکل)عراق میں حکومت مخالف مظاہروں میں روز بہ روز شدد آرہی ہے اور تشدد کے واقعات بڑھ رہے ہیں۔ کرپشن اور اقتصادی مشکلات کے خلاف اٹھنے والی یہ مظاہرے اب عوام کے ہاتھوں سے نکل کر تیسری قوتوں کے ہاتھوں میں چلی گئی ہیں۔ تقریبا دو ماہ سے جاری ان مظاہروں میں اب تک چار سو کے قریب جانیں ضائع ہوئی ہیں اور ہزاروں کے تعداد میں زخمی ہوئے ہیں اس کے علاوہ سرکاری تنصیبات اور عوامی املاک کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

اس وقت سب سے اہم بات مظاہرین کا اپنے اصل ہدف سے دور ہونا اور تشدد کی جانب بڑھنا ہے۔ خصوصا مذہبی حلقوں اور حشد الشعبی کے خلاف قدم اٹھانا ہے جنہوں نے ان کو داعش کے شر سے نجات دلایا تھا۔

معاملہ اب کرپشن اور اقتصاد کے دائرے سے باہر ہے اور حالات ایسے ہی برقرار رہے تو خانہ جنگی کی صورت حال پیدا ہوسکتی ہے۔ مظاہرین کے درمیان سازشی عناصر نے نفوذ پیدا کیے ہیں اور وہ مظاہرین کو اپنے مفادات کے لئے استعمال کر رہے ہیں۔ ان سازشی عناصر کو حکومت نے تیسری قوت قرار دیا ہے۔ تیسری قوت کے حوالے سے بات کرتے ہوئے عراقی وزیر کا کہنا تھا کہ یہ قوتیں امریکہ، اسرائیل اور سعودی عرب ہیں جو اپنے مفادات کی تکمیل کے لئے ان مظاہروں کا غلط استعمال کر رہے ہیں۔

سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ آخر ہر جگہ امریکہ، اسرائیل اور سعودی عرب کا کیوں نام آتا ہے مظاہرے تو عراقی کر رہے ہیں وہ بھی اپنے ہی مطالبات کے حق میں تو یہاں امریکہ کا کیا کام؟ جواب یہ ہے کہ جہاں امریکی مفادات ہوتے ہیں وہاں پر مستحکم حکومت کبھی امریکہ کے مفاد میں نہیں ہوتا، یہ بات ہم افغانستان سے لیکر افریقہ تک جہاں جہاں امریکہ ہے باخوبی مشاہدہ کرسکتے ہیں۔ کیونکہ اگر حکومت مستحکم ہوں اورعوام باشعور ہوں تو پھر امریکہ کے کالے کرتوت کھل جاتے ہیں۔ دوسرا جواب یہ ہے کہ اس وقت روس اور چین کے بڑھتے اثرورسوخ اور ایران سمیت مقاومتی بلاک کا مشرق وسطی میں بڑھتی کامیابی نے امریکی سپر پاور ہونے کے دعوے کو للکارا ہے اور شام، عراق اور لبنان میں امریکہ اور اس کے اتحادیوں کو منہ کی کھانی پڑی ہیں۔ تیسرا جواب یہ ہے کہ عراق میں مظاہرین کا روخ تشدد کی جانب مڑ نا، ایرانی کونسل خانے کو جلانا اور عراقی مذھبی شخصیات کے دفاتر پر حملہ کرنا یہ عام عراقی عوام نہیں کرسکتے ہیں۔

امریکہ کو عراق کے مذھبی حلقوں سے شکایت کیوں ہے؟ اس سوال کا جواب دینے سے پہلے ایک بات بتاتا چلوں کہ امریکہ جس ملک میں بھی اپنا اڈہ بناتا ہے تو سب سے پہلے اس ملک میں بدامنی اور انارکی پھیلاتا ہے، سقوط صدام کے بعد داعش کا سر اٹھانا امریکی پلانگ کا حصہ تھا داعش کے ذریعے امریکہ نے بیک وقت شام اور عراق دونوں میں خانہ جنگی شروع کروادی تھی اور اسی بہانے امریکہ نے یہاں رہنا تھآ اور ان کے قدرتی وسائل پر ڈاکہ ڈالنا تھا۔ اب آئیں جواب کی طرف امریکہ کو دھچکہ اس وقت لگا جب عراق کی سب سے بڑی مذہبی شخصیت آیت اللہ سیستانی نے داعش کے خلاف جنگ کا فتوی دیا جس کا اثر یہ ہوا کی لاکھوں کی تعداد میں عراقیوں نے لبیک کہا اور امریکی و داعشی عزائم کو خاک میں ملا دیا۔ جس کا براہ راست نقصان امریکہ، اسرائیل اور سعودی عرب کو ہوا کیونکہ داعش کو بنانے ان کی تربیت کرنے اور ان کو فنڈنگ کرنے میں ان تین ممالک کا مستقیم ہاتھ تھآ۔

اب امریکہ عراق میں میں ناکام ہوچکا تھآ اُس نے جس مقصد سے داعش کو بنایا تھا اس کا سو فیصد ثمر اس کو نہیں ملا بلکہ اس کے برعکس عراق میں آیت اللہ سیستانی کے فتوی کی وجہ سے ایک ایسی قوت  حشد الشعبی کے نام سے ابھر آئی جنہوں نے نہ صرف داعش کو شکست دی بلکہ امریکیوں کو بھی عراق چھوڑنے کا حکم دیا، دوسری طرف عراق کے رضاکار فورسیز نے اسرائیل کو بھی آنکھیں دیکھائی جس کے جواب میں اسرائیل نے ایک دو بار عراق میں حشد الشعبی سے متعلق ملٹری بیس پر فضائی حملے بھی کئے۔ عراق میں حشد الشعبی کی بڑھتی مقبولیت اور عراق ایران کے بہتر ہوتے تعلوقات امریکہ اسرائیل کے لئے خطرے کی گھنٹی تھی۔

دوسری جانب عراقی الیکشن میں امریکہ مخالف پارٹیوں کی کامیابی بھی امریکہ اور اس کے اتحادیوں کے لئے ناقابل برداشت تھا۔ جب عوام حکومت سے اقتصادی اصلاحات کا مطالبہ لئے سڑکوں پر نکل آئے تو امریکہ اور اس کے اتحادیوں کے لئے یہ ایک بہترین موقع ثابت ہوا اور انہوں نے اپنے ایجنٹوں کے ذریعے عوام میں یہ باتیں پھیلانا شروع کیا کہ عراق کی اقتصادی بحرانوں کا اصل سبب حشدالشعبی، مقاومتی بلاک اور ایرانی اثرورسوخ ہے جسکی وجہ سے آج عراقی مظاہرین کا ہدف تبدیل ہوا ہے۔ لیکن یہ بات یاد رہے کہ اس وقت بد امنی پھیلانے والوں کی اکثریت کا تعلق امریکہ اور داعش حمایتی افراد سے ہیں جو اس موقع سے فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ ابھی بھی عراقی باسی اور قبائلی افراد آیت اللہ سیستانی کی جانب دیکھ رہے ہیں تاکہ ان کے حکم سے ملک میں بدامنی پھیلانے والوں کا سر کچل سکے۔ مگر آیت اللہ سیستانی، مقتدا الصدر، عمار الحکیم سمیت اہم سیاسی و مذہبی شخصیات نے پُر امن مظاہرے کی حمایت اور حکومت سے فوری اصلاحات کا مطالبہ کیا ہے ساتھ ہی پُر تشدد واقعات کا سختی سے مذمت کی ہیں اور عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ پر امن رہیں۔

اس وقت عراق کی صورت حال کچھ ایسی ہے کہ عوام عوام کے خلاف برسرپیکار ہے جن کو قابو کرنا حکومتی بس کی بات نہیں ہے اور آخر میں ان تمام مشکالات کا حل مراجع اور مذھبی شخصیات ہی نکال سکتی ہیں۔ امید ہے کہ اس دفعہ پھر امریکہ اور اس کے اتحادی ناکام ہونگے اور انکے ناپاک عزائم خاک میں مل جائینگے، ساری دنیا کی نظریں آیت اللہ سیستانی پر ہیں اور مرجع تقلید حالات کی بہتری کی جانب پُر امید نظر آتے ہیں جس کا مطلب ہے کہ انشااللہ آئندہ جلد عراق کے حالات بہتری کی طرف لوٹ آئنگے۔


تحریر: ناصر رینگچن

وحدت نیوز(حیدرآباد) مجلس وحدت مسلمین حیدرآباد‎ کی جانب سے حرمت قرآن کے حوالے سے ایک احتجاجی ریلی حسینی مشن امام بارگاہ یونٹ نمبر9 سے نکالی گئی جو عام شاہراہ سے ہوتی ہوئی واپس اسی امام بارگاہ پر اختتام پذیر ہوئی۔ ریلی میں لطیف آباد کے مومنین و مومنات خصوصاََ  بچوں نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ ریلی میں موجود شرکاء سے مولانا گل حسن مرتضوی، مولانا عمران دستی اور مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین کی مرکزی سیکرٹری نشرواشاعت محترمہ عظمیٰ تقوی نے خطاب کیا۔

 شرکاء سے خطاب کرتے ہوے محترمہ عظمی تقوی کا کہنا تھا کہ رسولِ اکرم صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلّم نے فرمایا کہ میں تمہارے درمیان دو گرانقدر چیزیں چھوڑ کر جارہا ہوں ایک کتاب اللہ قرآن اور دوسرے میری عترت اہل بیت جو ان دونوں سے متمسک رہے گا میرے بعد گمراہ نہیں ہوگا اور یہ دونوں ایک دوسرے سے کبھی متفرق نہیں ہوں گے یہاں تک کہ میرے پاس حوض کوثر پر وارد ہوں گے۔ پس ہماری فلاح، نجات اور کامیابی اسی میں ہے کہ قرآن اور اہل بیت علیہم السّلام سے وابستہ رہیں۔

انھوں نے کہا کہ قرآن کی حفاظت کا ذمہ اگرچہ خداوند متعال نے خود لیا ہے مگر ہمارا بھی بطور مسلم فرض بنتا ہےکہ ہم اس کتاب الٰہی کی حرمت اور تقدس کی خاطر ہر طرح کی قربانی دینے کے لیے تیار رہیں۔ان کا کہنا تھا قرآن پاک کی بے حرمتی کی کوشش جہاں کہیں بھی کی گئی ہے ہم اس کی پرزور مذمت کرتے ہیں اور حکومت وقت سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اسلام و قرآن کے دشمنوں کا بائیکاٹ کرے اور قرآن کریم کی بےحرمتی کے خلاف بین الاقوامی سطح پر آواز اٹھائے۔

وحدت نیوز(حیدرآباد) مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین کے فلاحی پروجیکٹ مدرسہ ام ابیھا و تعیلم بالغاں سکول میں ہفتہ وار باجماعت نماز فجر اور محفل دعاے ندبہ کا انعقاد ھوا ۔اس موقع پر مدرسہ کی معلمہ اور ایم ڈبلیو ایم شعبہ خواتین کی مرکزی رابطہ سیکرٹری نے روز جمعہ کی اھمیت پر خواتین اور طالبات سے خطاب کیا ۔

انھوں نے کہا کہ خدا نے تمام ایام میں روز جمعہ کو فضیلت عطا کی اور اسے دعا و عبادات کے لیے مخصوص کیا ہے اور اس دن دنیاوی امور ترک کرکے خالصتاً بارگاہ الہی میں عبادت انجام دینے کی تاکید اور بے پناہ اجر کا وعدہ کیا ہے محتر۔

مہ سیمی نقوی نے کہا کہ جمعہ کا دن امام زمانہ عج سے منسوب ہے لھذا اس دن اپنے امام عج سے رابطہ مضبوط کیا جاے اور ان کے ظھور کی دعا کثرت سے کی جاے انھوں نے کہا کہ ہم پنجگانہ نماز کے پابند ہوجائیں اور اپنے پروردگار سے عبادات کے ذریعے رابطہ مضبوط کر لیں تو دینی و دنیاوی خسارے سے محفوظ رہیں گے۔

وحدت نیوز(ٹنڈومحمد خان) مجلس وحدت مسلمین اور امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن صوبہ سندھ ضلع ٹنڈو محمد خان کے تحت بعد نماز جمعہ ایم ڈبلیو ایم کے صوبائی سیکریٹری جنرل علامہ باقر عباس زیدی کی سربراہی میں گستاخ امام زمان (ع) ملعون ستار جمالی کے خلاف ریلی نکالی گئی۔ ریلی سے خطاب کرتے ہوئے علامہ باقر عباس زیدی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ آئمہ معصومین (ع) کی شان میں گستاخی کرنے والے مجرموں کو سخت سے سخت سزا دی جائے اور اس حوالے سے قانون سازی کی جائے تاکہ آئندہ ایسے کسی گستاخ کو ہمت نہ ہو۔


وحدت نیوز(لاہور)مجلس وحدت مسلمین نے جمعۃ المبارک کوپنجاب بھرمیں ’’یوم عظمت قرآن‘‘ کے طور پرمنایا، مساجد میں خطباء حضرات نے قرآن پاک کی عظمت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اسلام، امن و سلامتی کا دین ہے، اسلام انتہاپسندی اور دہشت گردی کے خاتمے کا درس دیتا ہے، قرآن کریم اصلاح انسانیت کیلئے اللہ کریم کی نازل کردہ آخری کتاب ہے، قرآن کریم امن،سلامتی، اعتدال کا درس دیتا ہے۔

مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کا کہنا تھا کہ اسلام دشمن شر پسند قوتیں آفاقی مذہب اسلام کی حقانیت سے خائف ہو کر ناقابل برداشت اور اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر آئی ہیں۔یہود ونصاری کو اس حقیقت کا درک کرنا چاہیے کہ اسلام کے بارے میں پورے عالم اسلام کے جذبات ایسے ہی ہیں۔یورپ سمیت پوری دنیا میں تیزی سے پھیلتا ہوا دین اسلام دشمن قوتوں کیلئے آنکھ کا کانٹا بنا ہوا ہے۔مذہبی تعصب شدت پسندی کے رجحانات کو تقویت دیتا ہے جس سے عالمی امن کو شدید خطرات لاحق ہیں۔

مجلس وحدت مسلمین کے صوبائی سیکرٹری جنرل علامہ عبدالخالق اسدی کا کہنا تھا کہ یہود و نصاریٰ اسلام دشمنی میں حد سے آگے بڑھ گئے ہیں، حالانکہ اسلام امن و محبت کا دین ہے، مسلمانوںکو متحد ہوکر اپنے دشمن کا مقابلہ کرنا ہوگا بصورت دیگر مسلمان ہی ان کا ٹارگٹ رہیں گے۔ انہوں نے کہاکہ جمعۃ المبارک کو عظمت قرآن منانے کا مقصد یہی ہے کہ دنیا کو قرآن کریم کی عظمت اور اصلاح انسانیت کے درس سے متعلق آگاہ کیاجائے۔

وحدت نیوز(جیکب آباد) مجلس وحدت مسلمین سٹی جیکب آباد کے زیراہتمام گستاخ امام زمانہ ع پر دھشت گردی کی دفعات لگانے کے لئے احتجاجی مظاہرہ کرکے شہر کے مین ڈی سی چوک پر دھرنا دیا گیا اور ٹائر جلا کر احتجاج رکارڈ کیا گیا۔

دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا کہ وفاقی حکومت اور سندہ حکومت کو گستاخ امام مہدی ع کے خلاف دھشت گردی اور توہین رسالت و توہین اھل بیت ع کی دفعات کے تحت مقدمات درج کرنے چاہئیں۔

انہوںنے کہاکہ ملعون ستار جمالی کےخلاف یہ کیس انسداد دہشت گردی عدالت میں چلانا چاہئے کیوں کہ امام مہدی ع وارث رسول اور خلیفتہ اللہ ہیں۔ جن کی شان میں سینکڑوں آیات و احادیث نازل ہوئیں۔

احتجاجی دھرنے سے ضلعی سیکرٹری جنرل حاجی سیف علی ڈومکی ،سٹی سیکریٹری جنرل نذیر حسین دایو، وسیم لطیف مہر، آئی ایس او کے رہنما سید ثاقب علی شاہ و دیگر نے خطاب کیا۔

Page 8 of 1371

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree