وحدت نیوز(گلگت) ہماری منزل ملک میں عدل و انصاف پر مبنی معاشرے کا قیام ہے،ہم کسی طور اپنے اہداف سے پیچھے ہٹنے والے نہیں چاہے پوری دنیا ہماری دشمن بنے۔مجلس وحدت مسلمین آج پورے ملک کے محروم و مستضعف عوام کی آواز بن چکی ہے۔

مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان شعبہ خواتین کی کوارڈینیٹر خواہر سائرہ ابراہیم اور خواہر جمیلہ نے اسکرداس نگر میں خواتین کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہماری ذمہ پہلے سے کہیں زیادہ بڑھ چکی ہیں۔عالمی حالات کے تناظر میں خواتین پر بھاری ذمہ داریاں عائد ہوتی ہیں اور ان ذمہ داریوں سے عہدہ برآ ہوئے بغیر فلاحی معاشرے کا قیام محض ایک خواب ہے۔بدخواہ حکمرانوں نے خطے کے عوام کے گرد سازشوں کا جال پھیلادیا ہے اور اپنے مذموم مقاصد کے حصول کی خاطر عوام کو تقسیم درتقسیم کیا ہے تاکہ یہ لوگ متحد ہوکر اپنے حقوق کیلئے کھڑے نہ ہوجائیں۔انہوں نے کہا کہ اس ملک کے بنانے میں ملت تشیع کے اکابرین کی محنتیں ہیں اور گلگت بلتستان کو آزادی کی نعمت دلانے کا سہرا بھی ملت تشیع کے سر ہے لہٰذا آج وطن عزیز جن مشکلات سے دوچار ہے ان مشکلات سے نکالنا ملک عزیز کو نکالنا بھی ہماری اولین ذمہ داریوں میں سے ہے۔

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے خواہر جمیلہ نے کہا کہ حکمرانوں نے لوٹ کھسوٹ کا بازار گرم کیا ہوا ہے اور عوام کے ساتھ جھوٹے وعدے کئے جارہے ہیں ۔اس خطے کے مظلوم عوام کی داد رسی کی بجائے ان کے زخموں پر نمک پاشی کی جارہی ہے۔ہمارے جوانوں کو قید و بند اور شیڈول فور میں ڈال کر خوف و حراس پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے لیکن مجلس وحدت مسلمین حکمرانوں کی اس خواہش کو ہرگز پورا نہیں ہونے دے ۔ہمیں قید و بند اور شیڈول فور کے ذریعے خوف زدہ نہیں کیا جاسکتا بلکہ قید و بند اور شیڈول فور ہمارے لئے باعث عزت و افتخار ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ آج ضرورت اس امر کی ہے کہ قوم کی مائیں بیٹیاں علم اور ہنر کے میدان میں اپنا نام پیدا کریں اور ان ظالم و جابر حکمرانوں سے نجات حاصل کرنے کیلئے صالح قیادت کو اسمبلی تک پہنچانے کیلئے مجلس وحدت کے ہاتھ مظبوط کریں۔

وحدت نیوز (شکارپور) مجلس وحدت مسلمین پاکستان صوبہ سندہ کے سیکریٹری جنرل اور شہداء کمیٹی کے چیئرمین علامہ مقصود علی ڈومکی نے ضلع شکارپور کے مختلف قصبوں کا دورہ کیا۔ اس موقع پربرادر فداعباس لاڑک، مولانا سکندرعلی دل،قمردین شیخ ، مولانا محبوب علی و دیگر ان کے ہمراہ تھے۔

 اس موقع پر گڑہی یاسین، خانپور، پیر چنڈام ، ڈکھن، مدیجی اور رتوڈیرو میںمیڈیا اور عوامی اجتماع سے گفتگو کرتے ہوئے علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا کہ جمعہ 27جنوری کو دھشت گردی کے خلاف سندہ بھر میں یوم احتجاج اور یوم سیاہ منایا جائے گا۔ سندہ کی سرزمین پر دھشت گردی کے اڈے اور ٹریننگ کیمپس قبول نہیں۔ سندہ حکومت نے وارثان شہداء سے کئے گئے معاہدے پر بھی عمل نہیں کیا۔ یوم احتجاج کی مختلف جماعتوں نے حمایت کی ہے۔انہوں نے کہا کہ دھشت گردی اور مذہبی منافرت معاشرے کیلئے نقصاندہ ہے ۔ہم دھشت گردی اور کرپشن کے خلاف سندہ کی سیاسی جماعتوں کے ساتھ مل کربھرپور جدوجھد کریں گے۔
                
انہوں نے کہا کہ ۳۰ جنوری کو شہدائے سانحہ شکارپور جامع مسجد سیدالشہداء ؑ کی دوسری برسی کے موقع پر( عظمت شہداء کانفرنس) منعقد ہوگی۔ کانفرنس میں ملک بھر سے جیدعلمائے کرام اور اکابرین شریک ہوںگے۔ کانفرنس سے قائد وحدت علامہ راجہ ناصر عباس جعفری خصوصی خطاب کریں گے۔ مجلس وحدت مسلمین جدوجہد کے ہر مرحلے میں وارثان شہداء کے شانہ بشانہ میدان عمل میں ہے۔ وارثان شہداء کمیٹی کی جدوجہد کی ہم بھرپور حمایت کرتے ہیں۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژنل سیکریٹریٹ سے جاری بیان میں مرکزی رہنما اور امام جمعہ علامہ سید ہاشم موسوی نے کہا ہے کہ 10 جنوری 2013 پاکستان کی تاریخ کا وہ سیاہ ترین دن تھا، جس دن اہل جور وستم نے ظلم و بربریت کی ایک بدترین مثال قائم کردی۔ جہاں علمدار روڈ پر نہتے اور بے گناہ 86 افراد کو زندگی کی نعمت سے محروم کردیا گیا اور سینکڑوں لوگ اس دھماکے میں زخمی اور اپاہج ہوگئے۔ کتنے گھرانے ایسے تھے جو اپنے واحد سرپرست سے محروم ہوئے۔ کتنی ماوؤں کے گود اپنے لاڈلے اور کتنے بچے جو باپ کے سایے سے محروم ہوئے۔ یوںتو سفاک دہشتگردوں نے بارود کے ذریعے اِن شہدا کے جسموں کے ہزارو ں ٹکڑے کر دیئے۔ مگر اِن پاکیزہ اجساد کاہر ٹکڑا اتنا پُر تاثیر ثابت ہوا کہ پاکستان کے طول و ارض سے لے کر دُنیا کے کونے کونے تک انسانی ضمیر کو جنجھوڑ کر رکھ دیا اور انھیں ظلم کے خلاف علم بغاوت لے کر باہر نکلنے پر مجبور کر دیا۔ یہ وہ پاک و مقدس لہو ہے جس نے اپنی حرارت سے سخت ترین سردی میں فضا کو ایسا گرمایا کہ لوگوںنے پورا ہفتہ سڑک پر گزار دیا اور اپنی ہمت سے اُس وقت کے کرپٹ اور ظالم صوبائی حکومت کو گھر کا راستہ دکھایا۔ مگر افسوس کے ساتھ کہنا پڑرہا ہے۔ کہ آج تک اُن قاتلوں کو نہ تو پکڑا گیا اور نہ ہی انکا پیچھا کیا گیا۔ جو بذات خود وفاقی و صوبائی حکومت اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے مُنہ پر ایک بدنما داغ ہے، جو کبھی نہیں دھول سکتی۔

انہوں نے کہا کہ مذکورہ شہدا کی برسی 13 جنوری کو شہدا چوک علمدار روڈ پر انتھائی عقیدت و احترام سے منایا جائیگا۔ جہاں ایک بڑی تعداد میں مرکزی قائدین اور مُلک کے گوشہ و کنار سے اکابرین کی آمد متوقع  ہے۔ اُنھوں نے اس حوالے سے کوئٹہ ڈویژن کے تمام یونٹس کو اپنی تیاریاں مکمل کرنے کی تلقین کی۔ بیان کے آخر میں موجودہ صوبائی حکومت اور وفاق سے یہ مطالبہ کیا گیا کہ 10جنوری 2013  اور باقی سانحات کے شہداء کے قاتلوں کو جلد سے جلد گرفتار کرکے کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔

وحدت نیوز(ملتان) مجلس وحدت مسلمین کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کی علالت پر مختلف مذہبی حلقوں، ایم ڈبلیو ایم کے رہنماوں اور کارکنوں میں سخت تشویش پائی جاتی ہے۔ ان کی صحت یابی کے لیے ملک بھر میں یوم دعا کا انعقاد کیا گیا۔ جماعت کے صوبائی و ضلعی دفاتر اور کارکنوں نے گھروں میں علامہ ناصر عباس کی صحت یابی کے لیے خصوصی دعائیں کیں۔ ملتان سمیت جنوبی پنجاب میں مجلس وحدت مسلمین کے دفاتر اور مساجد میں قائد وحدت کی صحتیابی کے لیے دعائیں کی گئیں، ملتان میں جامع مسجد الحسین نیو ملتان میں اجتماعی دعائیہ تقریب منعقد کی گئی۔ جس سے مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ سید اقتدار حسین نقوی اور ضلعی سیکرٹری جنرل سید ندیم عباس کاظمی نے خطاب کیا۔ واضح رہے کہ پاکستان میں جاری ٹارگٹ کلنگ، دہشت گردی اور ریاستی اداروں کے ذریعے ملت تشیع کو نشانہ بنانے کے خلاف علامہ ناصر عباس 80 روز سے بھوک ہڑتال پر تھے۔ ملک کی تمام بڑی سیاسی جماعتوں کے قائدین کی طرف سے ان کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا گیا اور حکومت کو یہ باور کرایا گیا کہ قائد وحدت علامہ ناصر عباس کے مطالبات آئینی اور اصولی ہیں ان کو فوری طور پر تسلیم کیا جانا چاہیے لیکن وفاقی حکومت کی روایتی بے حسی قائم رہی جس کے نتیجے میں کم و بیش تین ماہ سے بھوک ہڑتال پر بیٹھے ہوئے علامہ ناصرعباس کی صحت اچانک بگڑ گئی۔ علامہ اقتدار حسین نقوی نے کہا کہ حکمرانوں کی یہ رعونت ان کے اقتدار کے زوال کا باعث بنے گی۔ اگر وفاقی حکومت اس بھوک ہڑتال کا فوری نوٹس لیتے ہوئے مثبت اقدامات کرتی تو آج ایک ملک گیر سیاسی و مذہبی جماعت کے سربراہ کی زندگی کو یوں خطرہ نہ ہوتا۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکریٹری جنرل علامہ ناصرعباس جعفری نے سفیر انقلاب شہید ڈاکٹر محمد علی نقوی ؒکی اکیسویں برسی کے موقع پر وحدت سوشل میڈیا ٹیم کو جاری ویڈیوپیغام میں کہا ہے کہ پاکستان میں عدالت خواہی کے عظیم علمبردار شہید قائد حسینی ؒ اور ڈاکٹر شہید محمد علی نقوی تھے،جتنے بھی انبیاءآئے ان کی تحریک عدل خواہی کی تحریک تھی کہ لوگوں کو بیدار کریں باشعور کریں تاکہ انسان عدل کے نفاذکے لئے اُٹھیں،انبیا ءکی تحریک کو  دو لفظوں میں اگر خلاصہ کیا جائے تو یہ کہیں گئے کہ انبیا کی جدوجہد عدالت خواہی ، عدل کے نفاذ کے لئے تھی اور ظلم مٹانے کے لئے تھی ،یہ سلسلہ آگے بڑھتا گیا،انبیا کے ساتھ اولیا ءاللہ اس رستے پر چلتے رہے آئمہ اہل بیت ؑ نے اسی رستے کو اپنایااور اس جدوجہد میں کربلا ایک اہم موڑ ہے کربلا ایک اہم مرحلہ ہے عدالت خواہی کی تحریک کا ظلم ستیزی کا ظلم سے ٹکرانے کی تحریک کا !

ان کا کہنا تھا کہ شہید ڈاکٹر نقویؒ اور قائد شہید ؒاس سرزمین پرعظیم رہنما تھے،شہیدڈاکٹر نقویؒ،انبیاءکی عدالت خواہی اور ظلم ستیزی کی تحریک کے روحِ رواں تھے،انبیاء، آئمہ اور اولیاءکی تحریک عدل خواہی کو آگے بڑھانے کیلئے یہ دونوں شخصیات نمونہ عمل ہیں اور دونوں نے اس راستے میں قربانی دی شہید ہوئے،ڈاکٹر شہید میڈیکل کالج میں پڑھتے رہے تھے تو اس کے ساتھ وہ اپنی اجتماعی ذمہ داریوں سے بھی غافل نہیں تھے ،جب انقلاب اسلامی نہیں آیا تھا ۔جب دنیا اس طرح کے افکار سے زیادہ آشنا نہ تھی انہوں نے پاکستان کی سرزمین پر اس تحریک کو شروع کیا لوگوں کو منظم کیا ان کی تربیت کرنا شروع کی۔،ڈاکٹر نقوی ،عدالت خواہی اور ظلم ستیزی کی تحریک کا شجرہ طیبہ تھے ، جس کے پھل آج تک ہم دیکھ رہے ہیں،آج پاکستان میں اور دنیا بھر میں جہاں چلے جائیں آپ کو ڈاکٹر شہید محمد علی نقوی رح کے تربیت شدہ لوگ ملیں گے ، ہمیں شہید ڈاکٹر کے مشن کی تکمیل کے لئے خود کو آمادہ وتیار کرنا ہوگا۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) قائد شہید علامہ عارف حسین الحسینی ؒکی 27ویں برسی کا مرکزی اجتماع9اگست کو اسلام آباد میں منعقد ہوگا ،جس میں شہید قائد کے معنویٰ فرزندملک کے طول عرض سے جمع ہو کر ان کے نیک مشن اور پاکیزہ خون سے تجدید عہد وفا کریں گے، ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی سیکریٹری اطلاعات سید مہدی عابدی نے وحدت نیوزسے گفتگو کرتے ہوئے کیا، ان کا کہنا تھا کہ مرکزی سیکریٹری آفس علامہ اصغر عسکری اورسیکریٹری فلاح وبہبود نثارعلی فیضی کو شہید قائد کی برسی کے مرکزی اجتماع کی تیاریوں کے حوالے سے ٹاسک دے دیا گیا ہے ، علمائے کرام ، اکابرین اور ملی تنظیمات سے روابط اور دعوت دینے کے حوالے سے فعالیت کریں گے، انہوں نےبتایا کے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کی مرکزی کابینہ کا ماہانہ اجلاس مرکزی سیکریٹریٹ میں مرکزی سیکریٹری جنرل علامہ راجہ ناصرعباس جعفری کی زیر صدارت منعقد ہوا جس میں اس بات کا فیصلہ کیا گیا کہ قائد شہید علامہ عارف حسین الحسینی ؒ کی برسی کو جوش وجذبے اور عقیدت واحترام سے منانے کیلئے اسلا م آباد میں مثل سابق عظیم الشان اجتماع کا انعقاد کیا جائے، جس میں ملک بھر سے فرزندان شہید حسینی اکھٹا ہوکراپنے محبوب قائد سے عشق اور اپنی بھرپور سیاسی واجتماعی قوت کا مظاہرہ کریں ، پہلے 2اگست کی تاریخ طے کی گئی تھی لیکن چند ناگزیر وجوہات کی بناءپر تاریخ میں تبدیلی کی گئی ہے  ۔

Page 1 of 5

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree